0

پاکستانی طالب علموں کیلئے اچھی خبر، گوگل کا بڑا اعلان

سرچ انجن گوگل نے اے آئی ایسنشلز کورس، گوگل کیریئر سرٹیفکیٹ اسکالرشپس اور نئے پروگراموں کے ذریعے پاکستان میں مصنوعی ذہانت کی مہارت کو فروغ دینے کے لیے اپنی سپورٹ دگنی کردی ہے۔

تفصیلات کے مطابق گوگل اس بات کو یقینی بنانے کے لئے پرعزم ہے کہ ہر شخص مصنوعی ذہانت (Artificial Intelligence)سے فائدہ اٹھا سکے، گوگل کا کہنا ہے کہ ہم یقین رکھتے ہیں کہ یہ پروگرام اس جانب پہلا قدم ہے۔

 گوگل نے ایک نئے کورس  AI Essentials کا آغاز کیا ہے، جو مستقبل کے لیے زیادہ سے زیادہ لوگوں کو مصنوعی ذہانت کی مہارتوں کو حاصل کرنے میں مدد کرے گا، 2024 گوگل کیریئر سرٹیفکیٹس کے لیے 45،000 اسکالرشپس فراہم کرے گا، گوگل نے فری لانسرز اور خواتین کو ہنر مند بنانے کے لئے یہ نئے پروگرام شامل کیے ہیں۔

مصنوعی ذہانت سے آغاز کرنے والوں کے لئے ایک نیا تعلیمی کورس

گوگل کا کہنا ہے کہ یہ پروگرام ہمارا نیا، اپنی رفتار کے مطابق سیکھا جانے والا، آن لائن کورس ہے جو گوگل میں AI کے ماہرین کے ذریعہ پڑھایا جاتا ہے۔ اس کورس کے لیے مصنوعی ذہانت میں پہلے سے کسی  تجربے کی ضرورت نہیں ہے، اور اس کو مختلف کرداروں اور صنعتوں میں لوگوں میں پیداواری صلاحیت کو بڑھانے کے لیے، مصنوعی ذہانت میں ضروری مہارت حاصل کرنے اور مختلف AI ٹولز کے ذریعہ عملی تجربہ حاصل کرنے میں مدد فراہم کرنے کی غرض سے ڈیزائن کیا گیا ہے۔

گوگل کا کہنا ہے کہ اس کورس کی صورت میں، لوگ یہ سیکھیں گے کہ خیالات پر غور کرنے اور روزانہ کے کاموں کو تیزی پیدا  کرنے کے لئے AI ٹولز کا استعمال کیسے کریں، آپ یہ بھی سیکھیں گے کہ AI کے ممکنہ رجحانات کی نشاندہی کرکے مؤثر اشارے کیسے لکھے جائیں اور AI  کو ذمہ دارانہ طور پر کس طرح  استعمال کیا جائے، Google AI Essentials کورس، انگریزی میں، کورسرا  (Coursera)پر دستیاب ہے۔

Google AI Essentials کے علاوہ، گوگل کیریئر سرٹیفکیٹس (جی سی سی) تیزی سے بڑھتے ہوئے شعبوں میں انٹری لیول کی ملازمتوں کے لیے سیکھنے والوں کو تیار کرتے ہیں، خواہ یہ ڈیٹا کا تجزیہ کرنا ہو، سائبر سیکیورٹی یا ڈیجیٹل مارکیٹنگ، ہم نے اپنے سرٹیفکیٹس میں نئے وسائل بھی شامل کیے ہیں تاکہ سیکھنے والوں کو یہ جاننے میں مدد مل سکے کہ اُن کے شعبوں میں پیشہ ور افراد کس طرح مصنوعی ذہانت کا استعمال کر رہے ہیں۔

گوگل کیریئر سرٹیفکیٹس کے لیے گوگل 2024 میں 45 ہزار اسکالرشپس فراہم کرے گا

سن 2022 میں پہلی بار متعارف ہونے کے بعد سے، پاکستان میں جی سی سی کے 80 فیصد گریجویٹس نے بتایا کہ اِس پروگرام نے اُنہیں اپنے کیریئر میں آگے بڑھنے میں مدد کی ہے، اِس کے علاوہ، پارٹنر کی قیادت میں کیے جانے والے سروے (IRM/TechValley, 2023) کے مطابق، پروگرام سے فارغ التحصیل ہونے والی 28 فیصد خواتین نے مالی ترقی حاصل کرنے کی اطلاع دی۔

 24 فیصد نے کہا کہ انہوں نے نئی ملازمت حاصل کی یا ترقی حاصل کی، اور 91 فیصد پروگرام مکمل کرنے کے بعد زیادہ اعتماد محسوس کرتے ہیں۔

PAFLAفری لانسر اور کیریئر کامیابی (Career Kamyabi) پروگرام

پاکستان دنیا کی تیسری سب سے بڑی فری لانسنگ معیشت کا گھر ہے اور اس بات کو یقینی بنانا ضروری ہے کہ ملک کا فری لانس ٹیلنٹ مسابقتی رہے، خاص طور پر آج کے تیزی سے بدلتے ہوئے ڈیجیٹل ماحول میں، رواں سال گوگل نے پاکستان فری لانسرز ایسوسی ایشن (PAFLA) کے اشتراک سے ایک پروگرام تیار کیا ہے جو پاکستان میں فری لانس کمیونٹی کو سافٹ اسکلز مثلاً پرسنل برانڈنگ اور کمیونیکیشن اسکلز کے حوالے سے درپیش چیلنجوں سے نمٹنے میں مدد فراہم کرے گا۔ گوگل کے ماہرین کی جانب سے پڑھائے جانے والے اس پروگرام سے 50 ہزار PAFLA فری لانسرز مستفید ہوسکتے ہیں۔

پاکستان کے لیے گوگل کے کنٹری ڈائریکٹر، فرحان قریشی نے کہا کہ گوگل کیریئر سرٹیفکیٹس اقدام کے صورت میں ہم امید کرتے ہیں کہ پاکستان کے ڈیجیٹل منظر نامے میں مؤثر کردار ادا کرتے رہیں گے، ہماری اسکالرشپس اور تربیتی پروگراموں کو نہ صرف نوجوان پاکستانیوں کو ٹیکنالوجی کی دنیا میں تلاش کرنے میں مدد کرنے کے لئے تیار کیا گیا ہے بلکہ اُنہیں مالی طور پر بااختیار بنانے کے لئے بھی تیار کیا گیا ہے۔

فرحان قریشی نے کہا کہ ہم اپنے تمام مقامی شراکت داروں کے مشکور ہیں جنہوں نے ہمارے ساتھ ہاتھ ملایا ہے اور اس بات کو یقینی بنانے کے لئے تندہی سے کام کیا ہے کہ پاکستانی نوجوانوں کو اپنی پوری صلاحیت تک پہنچنے کے زیادہ سے زیادہ مواقع ملیں۔

Comments

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

Leave a Reply