0

9 مئی کو تصویر تلاش کرنے کے لیے گولی نہ کرنے کا حکم دیا جس کا سبب بن گیا: حامد میر

بہت شواہد دیکھ رہے ہیں جس سے یہ منصوبہ بندی کی گئی تھی، اگر عمران خان اس کا مذاق اڑائیں تو پھر یہ اپنے لوگوں کو چلتی ہے بس دھکا دینے سے: تخلیق کار/ تصویریں بنائیں۔
بہت شواہد دیکھ رہے ہیں جس سے یہ منصوبہ بندی کی گئی تھی، اگر عمران خان اس کا مذاق اڑائیں تو پھر یہ اپنے لوگوں کو چلتی ہے بس دھکا دینے سے: تخلیق کار/ تصویریں بنائیں۔

اسلام آباد: صحافی اور منصوبہ ساز کار حامد نے کہا کہ جس نے بہت شواہد دیکھے ہیں وہ 9 مئی کو پی ٹی آئی کو مکمل طور پر قبول کرنا چاہتے تھے اور 9 مئی کو گولی نہ مارنے کا مطالبہ کیا تھا۔ لوگوں نے خود پسندی کی۔

جیونیوز کے پروگرام جیو پاکستان میں گفتگو کرتے ہوئے حامد میر نے کہا کہ آصف زرداری نے کسی کو کہا کہ 9 مئی کو آئی کا نائن ایلیون ہے جس کے بعد دنیا بدل گئی تھی اسے 9 مئی کو پاکستان کو تبدیل کیا گیا تھا۔ ’’۔

انہوں نے کہا کہ ‘9 مئی صرف لاہور میں پاکستان میں نہیں ہوا، لاہور جیسے واقعات کے پی، بلوچستان اور کراچی میں بھی پنجاب کی نگران حکومت صرف لاہور کو فوکس کرتے ہوئے، یہ نگران حکومت کی یادداشت کی اطلاع ہے۔ کمیشن کے نمائندے ہیں، یہ سلطان کی جگہ پر بن راہی ہے، اگر یہ صرف ایک لیڈر کے گھر کو ٹارگٹ کریں گے تو اپنے پارٹی کے ساتھ کمیشن کو بھی بنارہے ہیں، پی کے واقعات۔ کوئی بھی مطالبہ نہیں کرتا، وفاق اور ان کی حکومت بھی نہیں اور وہاں بھی نہیں، تو پی پی میں ٹوپیں دریا میں پولس پولی، کیوں کہ کوئی بات نہیں ہے۔

حامد میر نے کہا کہ ‘عمران خان نے 9 مئی کی مذہبی اخلاقی پوزیشن میں نہیں، یہ آگ لگائی ہے انہوں نے ہی بھڑکائی تھی کیونکہ ایک بیان میں کہا تھا کہ عمران خان پاپولر ہیں، وہ اور اسلام آباد کو ٹیک اور سمجھیں گے۔ پاکستانیوں علی امین گنڈاپور نے عمران خان کو پتا چلایا تھا کہ ہمارے پاس پاکستان میں 10 سے 15 ہزار لوگ ان کو موبلائلز کرنا چاہتے ہیں۔

حامد میر نے انکشاف کیا کہ پی ٹی آئی کیمرے نے ایک منصوبے پر بنایا، مراد سعید نے کہا کہ عمران کی گرفتاری کے بعید ٹارگٹ پر پہنچیں، ملکار آفریدی جی ایچ کیو کی طرف جانے کا کہا، بہت شواہد دیکھے اس سے پتا چلا۔ یہ منصوبہ بندی تھی، اگر عمران خان نے اس کا مذاق اڑایا تو پھر یہ اپنے لوگوں کو چلتی بس دھکا دینے سے، اس نے کہا کہ کورکمانز ہاؤس میں گھسنے سے روکا نہیں گیا، اگر ویڈیو دیکھیں تو وہاں بات ہوئی۔ مجمعے نے جواب کھولا، فوجداری کا حکم دیا تھا کہ ان کو گولی نہیں چلائی جا سکتی، جس کے لیے انہوں نے عورت کو کمزوری، خواتین کو کوررز ہاؤس میں سب کو اندر داخل کرنے کے لیے اکسایا، عمران خواتین اور لوگوں کو ووٹ دینے کے لیے۔ یہ ایجنسی کے لوگ ہیں لیکن عمران خان کے پاس ثبوت دیتے ہیں، ہر طرح کے شواہد کے لوگ کوئی ایجنسی نہیں ہیں یہ پی ٹی آئی کے ایک ورکرز تھے۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘عمران کو ابھی تک یقین ہے اور وہ لوگوں کے خیال سے بات کر رہے ہیں، ان کا یہ زیادہ سے زیادہ پندہ کا ابال ہے، حکومت غلطیاں کرے گی جس کا نتیجہ مجھے دوبارہ ملے گا۔ معاملات ٹھیک ہوں گے، حکومت کی غلطیوں سے دوبارہ واپس آ جائیں گے، عمران خان نے وقت ضائع کرنے کی کوشش کی، عمران کے اعتماد کی وجہ سے کوئی مقبولیت نہیں، ان کے پاس کوئی بھی پروگرام ہے کہ اقتدار آکر ملک کو ترقی دے گا۔ شاہراہ پر آکر کیسے ڈالرز ہوں گے۔

صرف ایک صحافی نے انکشاف کیا کہ ‘حکومت کے لوگ ہی القادر کے ساتھ شریک ہوئے ہیں کو پانچوں کے لیے متحرک ہیں، اس پر خاموشی سے بات کی لیکن وہ پہلے یہ لوگ اپنے ساتھ اتفاق کرتے ہیں’۔

انہوں نے کہا کہ بہت سے لوگ پی ٹی آئی چھوڑ کر اس عمل کی حمایت نہیں کریں گے، لیکن اندر سے حقیقی یا (ق) پی برآمد کرنے کی کوشش کی جائے گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

Leave a Reply