0

غزہ پر جارحیت کے معاشی اثرات ، اسرائیلی کرنسی شیکل 2012 کےبعد کم ترین سطح پر آگئی

یروشلم : اسرائیلی کرنسی شیکل دوہزاربارہ کے بعد کم ترین سطح پرآگئی، امریکی ڈالرکے مقابلےمیں شیکل میں صفر اعشاریہ سات فیصدکمی ہوچکی ہے۔

تفصیلات کے مطابق اسرائیل کی غزہ پر جارحیت معاشی اثرات سامنے آنا شروع ہوگئے، اسرائیلی کرنسی شیکل دوہزاربارہ کےبعد کم ترین سطح پرآگئی۔

بلومبرگ نے بتایا کہ امریکی ڈالرکے مقابلےمیں شیکل میں صفر اعشاریہ سات فیصدکمی ہوچکی ہے، اسرائیل کے بانڈز اور اسٹاکس میں بھی کمی ریکارڈ کی گئی۔

اسرائیلی زرمبادلہ کے ذخائر میں سات ارب ڈالرزکی کمی ہوئی ہے، ستمبرمیں ایک اعشاریہ پانچ فیصد پررہنے والابجٹ خسارہ اکتوبرمیں جی ڈی پی کا دواعشاریہ چھ فیصد ہوچکا ہے۔

دوہزاربائیس میں سرپلس رہنے والا بجٹ جنگی اخراجات کے باعث دوہزار چوبیس میں تین اعشاریہ پانچ فیصد خسارے تک تک پہنچ سکتا ہے، 2022 میں معاشی شرح نمو جو جی ڈی پی کا چھ اعشاریہ پانچ فیصد تھی، اس وقت ایک اعشاریہ پانچ فیصد پر ہے اور آئندہ سال صفراعشاریہ پانچ فیصد تک پہنچ سکتی ہے۔

مرکزی بینک کا کہنا ہے اسرائیل کو یومیہ چھبیس کروڑ ڈالرزکا نقصان ہورہا ہے اور ان حملوں کی وجہ سےاسرائیلی معیشت کوپچاس ارب ڈالرکا نقصان ہوسکتا ہے۔3

موڈیز کا کہنا تھا کہ اسرائیل میں مہنگائی چھ اعشاریہ آٹھ فیصد پر جا سکتی ہے۔

خیال رہے زمینی محاذ پر شکست سے دوچار اسرائیلی فوج بوکھلاہٹ کا شکار ہے، ماہرین کے مطابق اسرائیلی فورسز کو بھاری نقصان اٹھانا پڑا ہے، جنگ کے دوران ہلاک اسرائیلی فوجیوں کی تعداد تین سو اکہتر ہوگئی ہے۔

Comments

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

Leave a Reply