0

اسرائیلی فوجی ٹینکوں سمیت غزہ کے اسپتال الشفاء میں داخل

غزہ : اسرائیلی فورسز غزہ کے سب سے بڑے اسپتال الشفاء میں داخل ہوگئی اور اسپتال کی بیسمنٹ میں تلاشی لے رہی ہے، جس سے مریضوں، طبی عملے اور پناہ لینے والے افراد میں خوف وہراس پیدا ہوگیا ہے۔

تفصیلات کے مطانق اسرائیلی فورسز ٹینکوں سمیت غزہ کے سب سے بڑے اسپتال الشفاء کے ایک حصے میں داخل ہوگئی ہیں، جس سے مریضوں، طبی عملے اور پناہ لینے والے افراد میں خوف وہراس پیدا ہوگیا ہے، اسپتال میں ہزاروں مریض اور عام شہری پناہ لیے ہوئے ہیں۔

ڈاکٹرز کا کہنا ہے کہ اسرائیلی فورسز نے اسپتال میں خوف ہراس پھیلا دیا ہے، اب کچھ بھی ہو ہم الشفا اسپتال نہیں چھوڑیں گے، مریضوں کیساتھ ہیں ، ہم مرگئے تو جنت میں ملیں گے۔

عینی شاہد نے بتایا ہے کہ اسپتال کے اندر 6اسرائیلی فوج کے ٹینک اور 100سے زائد اسرائیلی فوجی دیکھے ہیں، اسرائیلی فوج ایمرجنسی ڈیپارٹمنٹ کے مرکزی گیٹ سے داخل ہوئے۔

چیف الشفا اسپتال نے کہا کہ اسرائیلی فورسز اسپتال کےسرجیکل اور ایمرجنسی عمارتوں میں بھی داخل ہوئیں اور اسپتال کی بیسمنٹ میں تلاشی لے رہے ہیں۔

اسرائیلی فورسز کا دعویٰ ہے کہ اسپتال کے نیچےحماس کا خفیہ ٹھکانہ ہے تاہم حماس نے اسپتال کو کمانڈ سینٹر کے طور پر استعمال کرنے کی تردید کرتے ہوئے کہا ہے کہ الشفا اسپتال پر حملہ اسرائیلی فورسز کی ناکامی کو ثابت کرتا ہے اور اسرائیلی دعویٰ قتل عام کو درست قرار دینے کی کوشش ہے۔

دوسری جانب وائٹ ہاوس کا کہنا ہے کہ ہم اسپتال پربمباری کی حمایت نہیں کرتےاورنہ ہی اسپتال مسلح لڑائی نہیں دیکھناچاہتے۔

خیال رہے شمالی غزہ کے تمام اسپتالوں پر غاصب اسرائیلی فوج کا قبضہ ہوچکا ہے۔ اسپتالوں میں علاج کی سہولتیں ختم ہونے کے باعث زندگیاں بچانےکا عمل رک گیا ہے، مریض اور زخمی بے یار ومددگار ہیں۔ ہر گھنٹے نومولود اور مریض انتقال کر رہے ہیں۔ اسپتال قبرستان بن چکے ہیں جہاں میتوں کے ڈھیر لگے ہیں لیکن ان کو دفنانے والا کوئی نہیں۔

Comments

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

Leave a Reply