0

بہت زیادہ وقت تک موبائل کالز کا یہ اثر دنگ کر دے گا۔

یہ بات ایک طبی تحقیق میں سامنے آئی / فائل فوٹو
یہ بات ایک طبی تحقیق میں سامنے آئی / فائل فوٹو

کیا موبائل فون پر دوستوں سے طویل وقت تک باتیں پسند کرنا چاہتے ہیں؟

اگر نہیں تو یہ عادت آپ کو بلند آواز کا شکار بناتی ہے۔

یہ دعویٰ چین میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آیا۔

سدرن یونیورسٹی کی اس تحقیق میں بتایا گیا کہ ہر ہفتے موبائل فون پر 30 منٹ اس سے زیادہ بات کرنے کی عادت سے متاثر ہونے کا خطرہ 12 فیصد تک بڑھ جاتا ہے۔

ہائی بلڈ آپ کی دعا ہے جس سے ہارٹ اٹیک اور فالج جیسے امراض کا خطرہ بڑھتا ہے جبکہ دنیا بھر میں اس کی بڑی وجہ بھی مانا جاتا ہے۔

اس تحقیق کے لیے 37 سے 73 سال کی عمر کے 2 لاکھ زیادہ افراد کا ڈیٹا یو کے بائیو بینک سے حاصل کیا گیا ہے۔

تحقیق کے آغاز پر ان افراد کو ہائی بلڈ پریشر کی تصدیق ہوئی اور پھر ان سے کیا گیا کہ وہ کتنے سال سے موبائل فون استعمال کر رہے ہیں اور ہر ہفتے دیر تک کالز دیکھتے ہیں۔

موبائل فون کالز اور ہائی بلڈنگ کے نتائج کے درمیان تعلق سامنے آیا۔

درحقیقت ہائی بلڈ پریشر کی شکار بنانے والے دیگر عناصر جیسے عمر، جسم وزن، خاندان میں بلوچ کی حمایت اور کوڈ پر نظر رکھنے کا تعلق بھی اس سے ہے۔

ان افراد کا جائزہ 12 سال تک لیا گیا جس کے دوران لگ بھگ 14 ہزار ہائی بلڈ پریشر کی تشخیص کی گئی۔

محققین نے صارفین کو بتایا کہ بلند بانگ موبائل فون کا خطرہ اس ڈیٹا سے دور اردو سے 7 فیصد ہوتا ہے۔

جو لوگ ہر ہفتے 30 منٹ یا اس سے زیادہ وقت موبائل فون پر بات کرتے ہوئے گزارتے ہیں، ان میں بیماری کا خطرہ 30 منٹ سے کم وقت تک کالز کرنے کے مقابلے میں 12 فیصد زیادہ ہوتا ہے۔

اور دونوں خواتین میں یہ خطرے میں لوگوں کو ایک دوسرے کے ساتھ دیکھیں۔

جاکر نتائج کی زیادہ جانچ پڑتال سے معلوم ہوتا ہے کہ ہر ہفتے 6 گھنٹے سے پہلے فون کالز پر ہائی بلڈائی کا خطرہ 25 فیصد تک بڑھ جاتا ہے جبکہ 4 سے 6 گھنٹے میں یہ شرح 16 فیصد ریکارڈ کی جاتی ہے۔

تحقیق میں یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ اگر کسی فرد میں ہائی بلڈ پریشر جینیاتی خطرہ زیادہ ہوتا ہے تو موبائل کال میں بیماری کا خطرہ 33 فیصد تک بڑھ جاتا ہے۔

محققین نے بتایا کہ نتائج کے بارے میں معلوم ہوا ہے کہ اگر ہفتہ وار بنیادوں پر موبائل کالز کا دورانیہ 30 منٹ سے کم ہو تو ہائی بلڈ پریشر سے خطرہ نہیں بڑھتا۔

تاہم ان کا کہنا تھا کہ ان کے نتائج کی تصدیق مزید تحقیق کی ضرورت ہے، جس کے لیے موبائل کالز کم ہو سکتے ہیں تاکہ صحت کو نقصان نہ پہنچے۔

اس تحقیق کے نتائج یورپین ہارٹ جرنل میں شائع کرنا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

Leave a Reply